پی ایس او نے مالی سال 2018-19ء کی پہلی سہ ماہی کے مالیاتی نتائج کا اعلان کر دیا، کمپنی کا منافع بعد از ٹیکس 4.2 ارب روپے رہا

Date: 2018-10-29
کراچی ۔ 29 اکتوبر 2018ء

ملک کی سب سے بڑی آئل مارکیٹنگ کمپنی پاکستان اسٹیٹ آئل نے مالی سال 2018-19ء کی پہلی سہ ماہی کے مالیاتی نتائج کا اعلان کر دیا ہے۔ کمپنی نے بعد از ٹیکس منافع 4.2 ارب روپے حاصل کیا ہے۔ یہ اعلان بورڈ آف مینجمنٹ کے اجلاس کے دوران کیا گیا جو 30 ستمبر 2018ء کو ختم ہونے والی سہ ماہی کیلئے کمپنی کی کارکردگی کا جائزہ لینے کے لئے پی ایس او ہیڈ کوارٹرز میں منعقد ہوا۔

متعدد چیلنجوں کے باوجود پی ایس او کے مجموعی منافع میں 19 فیصد اضافہ ہوا جبکہ کمپنی نے زیر جائزہ مدت کے دوران 40 فیصد مجموعی شیئر کے ساتھ لقوڈ فیول کی مارکیٹ میں اپنی برتری برقرار رکھی۔ مالی سال 2018-19ء کی پہلی سہ ماہی کے دوران پی ایس او نے مجموعی طور پر 48 فیصد مصنوعات درآمد کیں اور ملک کی مجموعی ریفائنری کی پیداوار میں 34 فیصد کا اضافہ کیا۔

مقامی صنعت کو متاثر کرنے والے اندرونی و بیرونی عوامل کے باوجود کمپنی نے شاندار نتائج ظاہر کئے۔ ان عوامل میں سمگل شدہ مصنوعات کی آمد، عالمی نرخوں میں اضافہ کا رجحان، ملاوٹ، مارکیٹ میں نئے داخل ہونے والوں کی طرف سے بھاری رعایت کی پیش کش اور آئی ایف ای ایم کے طریقہ کار کا غلط استعمال شامل ہیں۔

بورڈ آف مینجمنٹ کے اجلاس میں حالیہ مہینوں میں کمپنی کو پیش آنے والے اہم چیلنجز بشمول آمدن کے دیگر ذرائع میں کمی، پاکستانی روپے کی قدر میں کمی کی وجہ سے شرح تبادلہ کے زیادہ نقصان، زائد شرح سود اور قرضوں کی سطح میں اضافہ کی وجہ سے مالیاتی لاگت بڑھنے جیسے امور بھی زیر بحث آئے۔ ان چیلنجز کے باعث کمپنی کے بعد از ٹیکس منافع میں کمی ہوئی۔